Wednesday, November 7, 2012

Shireen Mazari Aur Javed Iqbal k Naam


Tuesday, November 6, 2012

70 year old Mujahid fights against Bashars forces


 


70 year old Mujahid fights against Bashars forces in Aleppo and addresses Muslim youth - English !!

Our uncle has been killed yesterday. We ask Allah (swt) to grant him martyrdom.




























When hunger strikes, you hunt better!


Darkness can be befriended, light could be hated! When you are alone and desperate, you may find yourself cornered to your sorrows, wanting no more to thrive upon anything. Life becomes a boring schedule and happy moments bygone. Lethargy consumes your veins and there is nothing your heart beats for; tough it is to be sad with or without reason.

These moments might have been passed by many of you in life. Some of you might be in this state now, others still trying to evade this loathsome period.

Are we so vulnerable? The most dominant species of this earth easily succumbs to grief and loneliness… Bright men and beautiful damsels have turned crazy in their solitude. Many souls have taken their precious lives just to be on the other side. Is sadness and loneliness so destructive? Or is it that we become almost comfortable being in that state? We could ask ourselves – do I really want to get out of it? Is to face the world a desirable outcome? Disclaim the luxury of being lone and lost, hence to cross another line of defence? Overcome blockades, can I?

Of course, the question is why should I do that, for what? Meaning to live – long forgotten; and what do I think about tomorrow? Sure, it will pass slowly and painfully… There is no hope left in me!

Debilitating be those times, power is there within you to break free. Think about this:


 A lion could not get out of his den one day. A big rock had fallen and blocked the cave entrance. Trapped inside, he was very angry, frustrated and miserable. As time passed, his roars became pathetic growls. He moved around restlessly and sneered at the rock like a vengeful kitten. Soon enough, the king of jungle frowned and sat down gazing at the rock. In the darkness the rock seemed huge and blunter than a mortal enemy. He shivered in the nights and got frightened by the thunder. Life outside was scary, perturbed and in turmoil. He was lone but safe inside the den. The thunderstorm passed, but by then he was tired and the mane showed grey hairs. Movement, slight though it was, suddenly caught his eye – a little mouse was dashing towards the entrance. Desperate and hungry, he pounced after it. The tiny gap beneath the rock saved the little one’s life, and the lion crashed onto the rock. Unpleasant and painful it was, he started striking the rock with his once mighty paws. Seeing blood trickling down, frustrated and tired, the lion amassed himself onto the rock. He was hurt, starved and weak, and the rock bore his entire weight. The abrupt cracking sound was accompanied by a beam of light falling in, the rock had moved slightly. What he never realized was that the rock was almost round and moved at a strong enough push. After the clash and the heap, a push was it all needed, he was free. A week in dark solitude, he had become lean, sharp and swift. Weaker though he was, his hunger guided him and he ran faster. Thus, a prey to fate was turned into a dangerous predator again…”


You may find yourself left alone in a cave of darkness one day; no one to care about you, no news reaching you, only to fall prey to fate. What do you do then, think about the days of your glory and sit idle in a corner awaiting someone to come around? Mop the floor with your tears and build a fantasy world of misery? Blame all others for leaving you alone and forgetting about you? Etch your life story on the wall and stand guard for it, so that some explorer will discover your skeleton in future, nearby the beautiful engravings with which your life so sensitively depicted (could be an attractive spectacle in a museum, you know!)?

No one has to stay in a cave forever, just as every cocoon would see light one day. Be it sadness or loneliness you are succumbed to, the power is there in you, to push the rock off and breath in some fresh air. Think, once you are out, about those light rays kissing the greenery around, just to show you how beautiful the world can be! Imagine, and feel the dew drops slipping down your eyelashes, fallen just to evoke you from a long lazy slumber!

The world outside may not be that beautiful and comforting as I just portrayed. It is for you to see and feel what you choose to. How you take in what you see and how you are to look, is for you to decide. Shake yourself, be awakened, find yourself to face and brace life; the little mouse may not always be around to get you started!

Remember, even if whatever stopping you looks immovable or impassable, it may just need one mighty push; who knows it could be a round rock! Once you are out, you will realize – what you had gone through has toned you for a better hunt…

Force be with you for that one push!

A GLASS OF JUICE MAKES YOUR DAY HEALTHY, LIVE THE JUICY WAY


Lahore, November 05, 2012: Tetra Pak, world's leading food processing and packaging company, has last week launched a new communication campaign to create awareness about the nutritional benefits of drinking safe and healthy juices, especially as part of the breakfast meal.

The objective of the campaign is to create consumer awareness about the value of complementing meals with a healthy beverage in convenient and safe Tetra Pak packaging. It also highlights the importance of packaged juices as a vital component of a balanced diet.


"Packaged juices have always been the product of choice for health conscious consumers who want to stay active and healthy. The six layered Tetra Pak cartons protect nutritional value of the juice without the need of any preservatives. Conveniently available from grocery stores and other retail outlets, packaged juices are the perfect dietary complement for all meals, especially breakfast which is the most important meal of the day," remarks Kashif Bhatti, Marketing Director Tetra Pak Pakistan.

The campaign includes an engaging graffiti art competition, which offers young juice drinkers in academic institutions to win lucrative prizes. The graffiti art competition will be held in seven major cities.

In the first phase, students of art schools will paint imagery related to health, nature and happiness on giant wall-sized canvasses. In the second phase, high school students and teenagers will express their creativity by painting on life- sized Tetra Pak packages. All participating entries will be judged by celebrated art critics and winners will get exciting prizes.

Juice consumption helps provide the body with the water it needs for hydration and the energy. Juice products are made from naturally healthy and refreshing fruits and are a good source of Vitamins A and C, which help protect against immune system deficiencies, cardiovascular diseases and other serious ailments.

In Pakistan, where the compound annual growth rate of the juice, nectar and still drinks sector exceeds 16%, more and more health conscious consumers are drinking packaged juice to supplement their healthy and natural lifestyles.

 
ABOUT TETRA PAK®
Tetra Pak® is the world's leading food processing and packaging solutions company. Working closely with our customers and suppliers, we provide safe, innovative and environmentally sound products that each day meet the needs of hundreds of millions of people in more than 170 countries around the world.  With almost 22,000 employees based in over 85 countries, we believe in responsible industry leadership and a sustainable approach to business.  Our motto, "PROTECTS WHAT'S GOOD™," reflects our vision to make food safe and available, everywhere.
More information about Tetra Pak is available at www.tetrapak.com/pk

Samaa TV removed the POLL



How I Hacked An Electronic Voting Machine

What do you need to rig an election? A basic knowledge of electronics and $30 worth of RadioShack gear, professional hacker Roger Johnston reveals. The good news: we can stop it.


A simple non-cyber attack on an electronic voting machine
Vulnerability Assessment Team at Argonne National Lab
Roger Johnston is the head of the Vulnerability Assessment Team at Argonne National Laboratory. Not long ago, he and his colleagues launched security attacks on electronic voting machines to demonstrate the startling ease with which one can steal votes. Even more startling: Versions of those machines will appear in polling places all over America on Tuesday. The touchscreen Diebold Accuvote-TSX will be used by more than 26 million voters in 20 states; the push-button Sequoia AVC Voting Machine will be used by almost 9 million voters in four states,Harper’s magazine reported recently (subscription required). Here, Johnston reveals how he hacked the machines--and why anyone, from a high-school kid to an 80-year-old grandmother, could do the same.--Ed
The Vulnerability Assessment Team at Argonne National Laboratory looks at a wide variety of security devices-- locks, seals, tags, access control, biometrics, cargo security, nuclear safeguards--to try to find vulnerabilities and locate potential fixes. Unfortunately, there’s not much funding available in this country to study election security. So we did this as a Saturday afternoon type of project.

It’s called a man-in-the-middle attack. It’s a classic attack on security devices. You implant a microprocessor or some other electronic device into the voting machine, and that lets you control the voting and turn cheating on and off. We’re basically interfering with transmitting the voter’s intent.
We used a logic analyzer. Digital communication is a series of zeros and ones. The voltage goes higher, the voltage goes lower. A logic analyzer collects the oscillating voltages between high and low and then will display for you the digital data in a variety of formats. But there all kinds of way to do it. You can use a logic analyzer, you can use a microprocessor, you can use a computer--basically, anything that lets you see the information that’s being exchanged and then lets you know what to do to mimic the information.
I’ve been to high school science fairs where the kids had more sophisticated microprocessor projects.So we listened to the communications going on between the voter, who in the case of one machine is pushing buttons (it’s a push-button voting machine) and in the other is touching things on a touchscreen. Then we listened to the communication going on between the smarts of the machine and the voter. Let’s say I’m trying to make Jones win the election, and you might vote for Smith. Then my microprocessor is going to tell the smarts of the machine to vote for Jones if you try to vote for Smith. But if you’re voting for Jones anyway, I’m not going to tamper with the communications. Sometimes you block communications, sometimes you tamper with information, sometimes you just look at it and let it pass on through. That’s essentially the idea. Figure out the communications going on, then tamper as needed, including with the information being sent back to the voter.
We can do this because most voting machines, as far as I can tell, are not encrypted. It’s just open standard format communication. So it’s pretty easy to figure out information being exchanged. Anyone who does digital electronics--a hobbyist or an electronics fan--could figure this out.
The device we implanted in the touchscreen machine was essentially $10 retail. If you wanted a deluxe version where you can control it remotely from a half a mile away, it’d cost $26 retail. It’s not big bucks. RadioShack would have this stuff. I’ve been to high school science fairs where the kids had more sophisticated microprocessor projects than the ones needed to rig these machines.
Because there’s no funding for this type of security-testing, we relied on people who buy used machines on eBay [in this case the touchscreen Diebold Accuvote TS Electronic Voting Machine and the push-button Sequoia AVC Advantage Voting Machine]. Both of the machines were a little out-of-date, and we didn’t have user manuals and circuit diagrams. But we figured things out, in the case of the push-button machine, in under two hours. Within 2 hours we had a viable attack. The other machine took a little longer because we didn’t fully understand how touchscreen displays worked. So we had learning time there. But that was just a couple days. It’s like a magic trick. You’ve got to practice a lot. If we practiced a lot, or even better, if we got someone really good with his hands who practiced a lot for two weeks, we’re looking at 15 seconds to 60 seconds go execute these attacks.
I want to move it to the point where grandma can’t hack elections. We’re really not there.The attacks require physical access. This is easy for insiders, who program the machines for an election or install them. And we would argue it’s typically not that hard for outsiders. A lot of voting machines are sitting around in the church basement, the elementary school gymnasium or hallway, unattended for a week or two before the election. Usually they have really cheap cabinet locks anyone can pick; sometimes they don’t even have locks on them. No one signs for the machines when they show up. No one’s responsible for watching them. Seals on them aren’t much different from the anti-tamper packaging found on food and over-the-counter pharmaceuticals. Think about tampering with a food or drug product: You think that’s challenging? It’s really not. And a lot of our election judges are little old ladies who are retired, and God bless them, they’re what makes the elections work, but they’re not necessarily a fabulous workforce for detecting subtle security attacks.
Give people checking the seals a little training as to what to look for, and now they have a chance to detect a reasonably sophisticated attack. Do good background checks on insiders, and that insider threat would be much less of a concern. Overall, there’s a lack of a good security culture. We can have flawed voting machines, but if we have a good security culture, we can still have good elections. On the other hand, we can have fabulous machines, but if the security culture is inadequate, it doesn’t really matter. We’ve really got to look at a bigger picture. Our view is: It’s always going to be hard to stop James Bond. But I want to move it to the point where grandma can’t hack elections, and we’re really not there.

PTI Islamabad bogus voters list discssed in print media

PTI members raise issues of transparency in party polls

ISLAMABAD: The PTI Chairman Imran Khan’s old party fellows have raised serious objections over the transparency of upcoming Nov 2 internal elections, describing the whole exercise merely a “fraud” with devoted party activists.

“We would be left with no choice but to seek legal redress and such a step may lead to public disclosure of the electoral fraud that is being enacted under the guise of bringing a truly democratic PTI leadership to the fore,” reads their jointly written letter to election in-Charge Hamid Khan.

The letter, available with The News duly signed by 14 founding PTI members, focuses on what they write ‘bogus voters lists,’ ‘mode of voting’ and ‘nomination of the candidates’. It is also sent to other senior party leaders.

They include Jamil Abbassi, Mahmood Khan, Ali Awan, Mrs. Fauzia Arshad, Irfan, Nafeesa Khattak, PTI’s ex-Islamabad President Ch. Ilyas Meharban — PTI nominated Candidate for NA-49.

The entire responsibility for the loss of credibility in such an eventuality would rest with those dishonest and unfaithful party officials who are managing the intra party elections, according to the letter.

“The planned PTI elections are not only rigged and fraudulent but it would also destroy the party’s credibility beyond redemption and with this letter we are making a final attempt to redress internally fundamental issues of electoral transparency.”

They pointed out that the names of thousands of registered voters were missing from the voters lists. “Bogus CNIC numbers have been used to register voters,” putting the credibility of both the elections and the party at stake. Individuals with bogus CNIC numbers and no cell phone number have also been registered as PTI voters. Since the mode of voting is electronic, such bogus voters would seriously undermine the transparency of the entire electoral process.”

They reminded the party leadership that the PTI had boycotted the by-polls because of bogus electoral lists. “How can we, the dedicated members of PTI, be expected to participate in PTI intra party elections scheduled for Islamabad on bogus voters lists?

“The eligibility or disqualification criteria of candidates, they said, have not been specified. Out of a total of 884 nomination papers submitted, 378 or almost 43 percent of the nominations were rejected without assigning any reason in writing except being verbally informed that their names were not in the voter lists.”

“The party positions to be contested in the elections have not been specified nor has the Election Commission specified who would be elected on what position after counting of votes.“These are serious violations of any electoral process leave alone a party that claims to be the champions of free and fair elections.”

They said that despite requests, the mode of voting has neither been defined nor specified. “The EC’s specification just a few days before the polling day totally defies the PTI’s public stance of setting an example of transparent elections.”

Microsoft Offers Upgrade Discount, Get Windows 8 for PKR 1,310 Only


Microsoft recently announced the availability of Windows 8 for its customers in Pakistan

Get Windows 8 in PakistanOption One (for PKR 1,310):


With a special offer, Microsoft is offering all Windows users to upgrade their operating system to Windows 8 for just Rs. 1,310 if they purchased a compatible PC computer/laptop during June 2, 2012, and January 31, 2013 that has windows 7 installed on it.
If so, then you can upgrade your OS to Windows 8 for PKR 1,310 by clicking this link:

http://windowsupgradeoffer.com/en-PK


Option Two: (for PKR 3,800)
Those with genuine Windows XP, Vista and Windows 7, and didn’t buy computer during up-mentioned duration can upgrade to Windows 8 for USD 40 or PKR 3,800.
This limited duration discount offer can be availed by clicking this link:
http://windows.microsoft.com/en-PK/windows/buy


“With the launch of Windows 8, Microsoft is unveiling a reimagined Windows to the world,” said Sherif Morsi: Windows Business Group Lead, Microsoft North Africa, East Mediterranean and Pakistan. “Whether you want a tablet or a PC, whether you want to consume or create, whether you want to work or play – Windows 8 delivers a personalized experience that fits your unique style and needs.”
Windows 8 will be available in two versions at retail, Windows 8 and Windows 8 Pro. And for business customers, Windows 8 Enterprise offers new possibilities in mobile productivity with features like Windows to Go, Direct Access, and Branch Cache, as well as enhanced end-to-end security with features including Bit Locker and App Locker.
Launching at the same time is a new member of the Windows family designed for ARM-based tablets, Windows RT, which will be available pre-installed on new devices. Windows 8 features the new fast and fluid Start screen that gives people one-click access to the apps and content they care most about, the entirely new Internet Explorer 10 that is perfect for touch, and built-in cloud capabilities with SkyDrive.

غریب ملک کا شاہ خرچ وزیراعظم



عمران خان کی سونامی جھاگ میں بدل رہی ہے؟


تبصرہ: ندیم سعید

عمران خان کی سیاسی سونامی جو ان کے گزشتہ برس اکتوبر میں لاہور کے عوامی جلسے کے بعد سے ٹھاٹھیں مار رہی تھی لگتا ہے جوں جوں انتخابات قریب آرہے ہیں اس کا زور ٹوٹتا جا رہا ہے۔ منتخب ہونے کی صلاحیت رکھنے والے روایتی سیاستدان تحریک انصاف کے ویٹنگ روم میں کچھ دیر سستا کے اب وہ ٹرینیں پکڑ رہے ہیں جن کا اقتدار کی منزل پر پہنچنے کا امکان ہے۔ عمران خان جو ان منجھے ہوئے سیاستدانوں کی شمولیت پر شادا ں تھے اب کہہ رہے ہیں کہ کسی کے آنے جانے سے ان کی پارٹی کو کوئی فرق نہیں پڑتا، وہ یہ بھی تسلیم کر رہے ہیں کہ ان کی جماعت کا گراف نیچے گرا ہے، اگرچہ الزام یا سہرا اس کا وہ پنجاب اور وفاق کی حکومتوں کے میڈیا سیلز کو دیتے ہیں۔ جب یہ سیاستدان جوق در جوق تحریک انصاف میں شامل ہو رہے تھے تو مرحبا مرحبا کا شور تھا اور اب جب وہ چھوڑ رہے ہیں تو ان کی سابقہ مبینہ بدعنوانیاں گنوائی جا رہی ہیں، یعنی اگر وہ تحریک انصاف میں رہتے تو پاک اورجا رہے ہیں تو گناہگار۔ 
تحریک انصاف شہری نوجوانوں اور غیر وابستہ ووٹروں میں مقبول ہے، جس کی بڑی وجہ عمران خان کا اس کرکٹ جنونی ملک کے لیے ورلڈ کپ جیتنا اور پھر کینسر ہسپتال کا قیام ہے۔ پھر عمران خان اقتدار کی پل صراط پر ابھی آزمائے بھی نہیں گئے جبکہ اقتدار کی سیاست کی دوسری بڑی جماعتیں بشمول پاکستان آرمی کے گزشتہ تیس بتیس سال میں دیکھی بھالی جا چکی ہیں۔ عمران خان کی ظاہری مقبولیت میں میڈیا خاص طور پر شہری بابو اینکروں میں ان کے لیے چاہت بھی ہے۔ (ظاہری مقبولیت اس لیے کہ حقیقی مقبولیت انتخابی نتائج سے جڑی ہوئی ہے)۔ پاکستان میں صدارتی نظام تو رائج ہے نہیں کہ پورا ملک ایک حلقہ ہو، یہاں پارلیمانی نظام ہے اور سینکڑوں انتخابی حلقے، ہر حلقے کی اپنی سیاست ۔ رہنماء ہرحلقے میں انتخاب لڑنے سے رہا، بلکہ انتخابی مہم کے دوران لیڈرہر حلقے میں بھی نہیں پہنچ پاتا۔ اگرچہ شہروں میں بھی ذات برادریاں انتخابات میں اہم کردار ادا کرتی ہیں لیکن یہ عنصر شاید اتنا غالب نہیں ہوتا جتنا دیہاتوں میں جہاں انتخاب لڑا ہی اسی بنیاد پہ جاتا ہے۔ مثلاً مرحوم فوجی آمر ضیاء الحق کے بیٹے اعجاز الحق کا بہاولنگر سے کوئی تعلق نہیں مگر وہ وہاں سے امیدوار ہوتے ہیں کیونکہ وہاں ان کی ارائیں برادری کا ووٹ بنک ہے۔ میدان سیاست کے پرانے کھلاڑی اپنی کامیابی کو یقینی بنانے کے لیے ’ٹاپ اپ‘ کے طور پرایسی سیاسی جماعتوں کے ٹکٹ لے لیتے ہیں جن کا ووٹ بھی ہوتا ہے اور اقتدار میں آنے کا امکان بھی۔ عمران خان کی ویگن سے جو سواریاں اتر رہی ہیں وہ ہیں جو انتخابی سیاست کے منجھے ہوئے کھلاڑی ہیں اور مطلب اس کا یہ ہے کہ انہیں محسوس ہو رہا ہے کہ تحریک انصاف ان کے ووٹ ٹاپ اپ نہیں کر سکتی۔ انتخابی معرکے ٹیکنو کریٹس نہیں بلکہ سیاستدان سر کرتے ہیں۔عمران خان سیاست میں اس عمر میں آئے تھے جس عمر میں اوبامہ امریکہ کے صدر اور کیمرون برطانیہ کے وزیراعظم منتخب ہوچکے تھے۔ ہر شعبے کی طرح سیاست بھی تجربے سے آتی ہے ۔ تحریک انصاف میں سابق سفراء، بیورکریٹس اور آرمڈ فورسز کے ریٹائرڈ افسروں کی بھرمار ہے جو عوام سے ہمیشہ دور رہے ہیں اور سیاست ان کے لیے ایسے ہی ہے جیسے ریٹائرمنٹ کے بعد وقت گزاری کے لیے گاف کھیل لی یا برج۔ ایسا نہیں کہ ان میں سے کسی میں بھی ملکی حالات بہتر کرنے کی خواہش نہیں، لیکن کیا کیا جائے صرف خواہش سے کام نہیں چلتا۔ان میں سے شاید ہی کسی کا کوئی انتخابی حلقہ ہو۔ عمران خان ذوالفقار علی بھٹوبھی نہیں کہ کھمبے کو بھی کھڑا کر دینگے تو لوگ ووٹ دے دینگے۔ جو سیاستدان ہیں ان کا بھی انداز عوامی نہیں ہے۔ مخدوم شاہ محمود قریشی اور جہانگیر ترین ’پاور پوائنٹ‘ سیاستدان ہیں، جو شاید اچھی Presentations تو بنا لیتے ہوں لیکن تحریک انصاف کی ملک گیر کامیابی میں کوئی کردار ادا نہیں کر سکتے۔ شاہ محمود قریشی کو اپنے حلقے میں مشکل صورتحال کا سامنا ہوگا جبکہ جہانگیر ترین کی انتخابی سیاست اپنے کزن رحیم یار خان کے مخدوم احمد محمود کے مرہون منت ہے جو سابق وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی کے بھی پھوپی زاد ہیں۔لغاری برادرز (جمال لغاری اور اویس لغاری) اور ان کی کالا باغ سے پھوپی زاد سمیرا ملک اور عائلہ ملک بھی اپنے حلقوں سے باہر نہیں نکل سکیں گے۔ رہی سہی کسر تحریک انصاف کی نظریہ ساز بیگم شیریں مزاری نے لیڈر پر کھلے عام تنقید اور پارٹی چھوڑ کے کر دی ہے۔ ان کے اس فیصلے پر ان کی بیٹی کو سوشل میڈیا پر تحریک انصاف کے Cyber Trollsکے ہاتھوں جس صورتحال کا سامنا کرنا پڑا ہے اس پر وہ بلبلا اٹھی ہیں، اور انہوں نے اس راز سے پردہ اٹھا ہی دیا کہ تحریک انصاف کی Cyber Bulling کے پیچھے پارٹی کے سیکرٹری جنرل عارف علوی کے بلاگر بیٹے اواب علوی ہیں۔( سینئر صحافی نصرت جاویداپنے پروگرام بولتا پاکستان میں اس خدشے کا اظہار کئی ماہ پہلے ہی کر چکے تھے)۔ گزشتہ شب ایک ٹاک شومیں شریں مزاری، محمد خان ہوتی (ریکارڈیڈ)، اکرم بھنڈر اور عارف علوی شریک تھے۔ اکرم بھنڈر جنہوں نے تحریک انصاف چھوڑ کے مسلم لیگ نواز میں شمولیت اختیار کر لی ہے نے انکشاف کیا کہ اپنی پارٹی میں لیتے ہوئے عمران خان نے انہیں کہا تھا کہ آئی ایس آئی نے بھی آپ کو کلیئر کردیا ہے۔اس پر اینکر پرسن خاصے چونکے لیکن جلد ہی انہوں نے الٹااکرم بھنڈرکو لتاڑنا شروع کردیا کہ آپ کو آئی ایس آئی سے کلیئرنس کی ضرورت کیوں محسوس ہوئی، حالانکہ اکرم بھنڈر کے کہنے کا واضح مطلب تھا کہ یہ انکشاف ان پر شمولیت کے وقت کیا گیا، اس پر سوال تو تحریک انصاف سے بنتا تھا کہ کیا وہ آئی ایس آئی سے Vetting کرواتے ہیں؟ شیریں مزاری کا کہنا تھا کہ سونامی محض ایک نعرہ تھا جبکہ عارف علوی کہہ رہے تھے کہ ایسا انقلاب آ رہا ہے جس کا لوگوں کا بھی پتہ نہیں۔ اب جس انقلاب کا عوام کو بھی علم نہیں تو وہ عوامی تو نہ ہوا۔ عمران خان کی مقبولیت کا سکہ انتخابی سیاست میں چلنے کا شاید ابھی وقت نہیں آیا اور لگ ایسا رہا ہے کہ کم از کم آنے والے انتخابات میں سونامی سمندر کی جھاگ ثابت ہوگی۔

Monday, November 5, 2012

General Kiyani Hits back on "JUDICIAL ACTIVISIM"



ذرا سوچئے، یہ ہماری قوم کے لیے لمحہِ فکریہ ہے۔۔۔


While speaking to a group of officers at GHQ, Chief of Army Staff General Ashfaq Parvez Kayani said, “as a nation, we are passing through a defining phase. We are critically looking at the mistakes made in the past and trying to set the course for a better future. An intense discussion and debate is natural in this process. No individual or institution has the monopoly to decide what is right or wrong in defining the ultimate national interest. It should emerge only through a consensus, and all Pakistanis have a right to express their opinions. The constitution provides a clear mechanism for it. We all have a great responsibility to shoulder. We should learn from our past, try to build the present and keep our eyes set on a better future. We all agree that strengthening the institutions, ensuring the rule of law and working within the well defined bounds of the constitution is the right way forward. Weakening of the institutions and trying to assume more than one's due role will set us back. We owe it to the future of Pakistan, to lay correct foundations, today. We should not be carried away by short term considerations which may have greater negative consequences in the future. Armed Forces draw their strength from the bedrock of the public support. National security is meaningless without it. Therefore, any effort which wittingly or unwittingly draws a wedge between the people and Armed Forces of Pakistan undermines the larger national interest. While constructive criticism is well understood, conspiracy theories based on rumours which create doubts about the very intent, are unacceptable. The integrity and cohesion of the Armed Forces is essentially based on the trust reposed in them by the people of Pakistan. Strengthening this trust will ensure better security of the Country. Equally important is the trust between the leaders and the led of the Armed Forces. Any effort to create a distinction between the two, undermines the very basis of this concept and is not tolerated, be it Pakistan or any other country. While individual mistakes might have been made by all of us in the Country, these should be best left to the due process of law. As we all are striving for the rule of law, the fundamental principle; that no one is guilty until proven, should not be forgotten. Let us not pre judge anyone, be it a civilian or a military person and extend it, unnecessarily, to undermine respective institutions. All systems in Pakistan appear to be in a haste to achieve something, which can have both positive and negative implications. Let us take a pause and examine the two fundamental questions; One, are we promoting the rule of law and the Constitution? Two, are we strengthening or weakening the institutions? In the ultimate analysis, all of us would have served Pakistan better if history and our future generations judge us positively.”




Imran Khan and Benazir Bhutto Affair ,Myth or reality???

A new biography of Imran Khan has claimed the former international cricketer and Benazir Bhutto, the assassinated former Prime Minister of Pakistan, were romantically involved while they were both students at Oxford University.


Author claims Benazir Bhutto and Imran Khan were an item at Oxford University
Imran Khan and Benazir Bhutto Affair ,Myth or reality???



The respected author, Christopher Sandford, has claimed that Bhutto became infatuated with Khan and the pair enjoyed a "close" and possibly "sexual" relationship
 while studying at Oxford.
He also alleges that Khan's mother tried, unsuccessfully, to organise an arranged marriage between the pair.
Until now, it had always been believed that Khan and Bhutto had always been at loggerheads both politically and personally. Khan openly criticised the former prime minister just days before her death.
However, Sandford, who interviewed both Khan and his ex-wife Jemima for the book, claims a source told him that Bhutto was 21 and in her second year of reading politics at Lady Margaret Hall when she became close to Khan in 1975.
The source told Sandford she had been "visibly impressed" by Khan and may even have been the first to call him the "Lion of Lahore".
"In any event, it seems fairly clear that, for at least a month or two, the couple were close. There was a lot of giggling and blushing whenever they appeared together in public," Sandford told the Daily Mail.
He added: "It also seems fair to say that the relationship was "sexual", in the sense that it could only have existed between a man and a woman. The reason some supposed it went further was because, to quote one Oxford friend: 'Imran slept with everyone.'"
However, Khan strongly denies that he ever had a sexual relationship with Bhutto.
He agrees he was interviewed for the book, but has not yet read it.
He told the Daily Mail: "Yes, I was interviewed, but I know nothing about the rest of what has been written. So it is not official.
"It is absolute nonsense about any sexual relationship or my mother and an arranged marriage. We were friends – that's all."


The question is why IK dint reciprocate BB's love with love.Its a confusing for me as well because I have seen IK always have good remarks for benazir in Pvt.I have actually seen IK and Benazir having a chat in dubai it was like two very close buddies talking to each other.It was a pleasant surprise for me then.



Sunday, November 4, 2012

"Bhaaggnay Naa Payee" Nice column by Shaheen Sehbai


To watch full Size imge Right Click On Imge and open in a new tab or Download picture



Woman Gives Birth to Horse in Edo Church

Many people are of the “End Time is Near” school of thought, and events like this points to that ideology. Church goers got the shocker of their lives today as a woman delivered a horse.

Worshippers of the World Liberation Ministry located along old Sapele-Benin express road on Tuesday took to their heels during a prophesy programme when a female member delivered a horse.



The horse was however dead by the time Journalists visited the church.

It was gathered that the woman whose identity was not yet known started screaming during the prayer session and began to bleed from the vagina before the horse came out.

The General Overseer of the church, Evangelist Silva Wealth, said he was still amazed at what came out of the woman.

He told Journalists that during prayers a revelation came that there was a woman with an issue and that something was blocking her womb.
Silva said as prayers intensified, the woman started screaming and bleeding started when the object came out.

The cleric said he couldn’t confirm whether the horse was dead or alive because he didn’t go near it.

“I can’t describe the object. We have seen people that vomited several things during our service but not this type of thing. God has been blessing our ministry with prophesies and miracles, “he said.

People rushed to the church to catch a glimpse of the horse when news of the delivery filtered into town.

Woman’s Ear Regrown In Her Forearm:


Woman’s Ear Regrown In Her Forearm: In one of the more bizarre, but nevertheless miraculous, feats of modern medicine, doctors at Johns Hopkins University were able to give a woman her ear back by first growing it beneath the skin of her forearm.

Sherrie Walter visited her dermatologist because of a pain in her left ear. It turned out that the pain was being caused by basal cell carcinoma. By October 2011 the cancer had spread to her ear canal, making the amount of tissue that needed to be removed extensive. In a 16-hour procedure, doctors removed, not just her entire ear, but neck glands, lymph node tissues, and a portion of her skull.

Dr. Patrick Byrne, associate professor in otolaryngoilogy-head and neck surgery at Hopkins, explained to Walter that prosthetic ears don’t always stay fixated to the head – that, sometimes, they fall off. And given the extent of the procedure, her situation was worse. “Sherrie’s skull bone had been removed,” he told ABC News, “so the only way of attaching a prosthetic would be through tape and glue. We both agreed that wasn’t an option.”

The second option was to reconstruct the ear. But the skin needed for reconstruction comes from the face and neck, and the initial surgery had already removed most of the skin from those areas. So Byrne suggested a procedure seemingly out of a science fiction movie. They would reconstruct an incomplete ear using the skin they had, then plant the ear beneath the skin of her forearm. There the ear could survive and be given the time to grow. Cartilage from Walter’s rib cage, and skin and arteries from other areas of her body were placed in her arm. The skin was left to grow around the tissue. After being in her arm for four months, the new ear was taken out and reattached this past March. Since the reattachment the team has been sculpting the skin and cartilage so that the shape matched the right ear. The sculpting process ended Oct. 2, the last of a series of surgeries spanning 20 months.

According to the Baltimore Sun, the procedure is believed to be the most complicated ear reconstruction ever performed in North America.

The bizarre procedure had actually been conceived of a while ago. But, according to Dr. Byrne, they were waiting for the patient who was the right age, in good health and had a “good support system.” Walters turned out to be that patient.

The procedure did have its share of difficulties, however, both for the patient and for doctors. The skin over Walter’s forearm was initially too tight to implant the ear. To loosen the skin, a balloon filled with saline was placed beneath the skin to stretch it out. It was a painful process for Walter who had to wear the balloon for several weeks.

World's longest married couple - To have and to hold ... for 87 years!


World's longest married couple - To have and to hold ... for 87 years! World's longest married couple share their secrets to living happily ever after.
- Karam, 107, and Katari, 100, have been married for 87 years - They have 8 children and 28 grandchildren together.
- The marriage is almost 5 years longer than current Guinness record holders.
- Couple say that laughter and looking after each other is key to marriage.

This picture was taken by samiullah mirag during the earthquake mission in Balakot, October 2005. MA-SHAA ALLAH



Maximum Shares Please

بالاکوٹ زلزلہ کی ایک یادگار تصویر۔
عمارت منہدم ہوگئی مگرکلمہ طیبہ والاحصہ سلامت ہے۔
ہمیں اس تصویر سے عبرت حاصل کرنی چاہئیے ۔

Facebook offers new users a privacy education tour


new Face book members will now be offered a virtual privacy education tour, which offers step-by-step instructions on Facebook’s various security settings and tools. This move comes after a variety of criticism over Facebook’s constantly changing settings, some of which are difficult to locate. Also contributing was an audit by the Irish Data Protection Commissioner’s Office.
Last year, the Irish Data Protection Commissioner’s Office looked into Facebook’s compliance with Irish and European Union privacy laws. The social network’s international division is located in Ireland, hence the reason for the IDPCO’s audit. The recommendations that resulted from the audit included, among other things, that links to privacy policies be made available during registration when a new member signs up.
The new privacy education tour will show members how to change their settings for various levels of privacy, such as how to decide who sees status updates. An explanation of games, apps, and advertisements will also be provided. Users will be shown how to find friends, and how to tag photos, both of which we presume have some kind of security slant.
Said Erin Egan, Facebook’s Chief Privacy Officer, “At Facebook, we’re committed to making sure people understand how to control what they share and with whom. We appreciate the guidance we’ve received from the Irish Data Protection Commissioner’s Office as we strive to highlight the many resources and tools we offer to help people control their information on Facebook.” Currently, Facebook has over 1 billion active monthly users, 818 million of which are located outside of the United States and Canada.

ایک لاکھ سے زائد روہنگیا امداد کے منتظر


برما کے مغربی علاقوں میں کام کرنے والے امدادی کارکنوں کا کہنا ہے کہ بےگھر ہونے والے ایک لاکھ سے زائد روہنگیا مسلمانوں کے لیے مزید امداد کی ضرورت ہے۔

برما کی ریاست رخائن میں رہنے والے بودھ اور روہنگیا مسلمانوں کے درمیان ہونے والے فسادات کے نیتجے میں ان افراد میں سے 
بیشتر کی بستیاں جلا دی گئیں جس کی وجہ سے وہ نقل مکانی پر مجبور ہوئے۔
قوام متحدہ کے تحت کام کرنے والے مختلف اداروں نے ان مہاجرین میں امداد تقسیم کرنے کا کام شروع تو کیا ہے مگر ان کا کہنا ہے کہ ان مہاجر بستیوں میں سہولیات بہت محدود ہیں۔

رخائن ریاست کے صدر مقام ستوی میں موجود بی بی سی کے جنوب مشرقی ایشیا کے نامہ نگار جوناتھن ہیڈ نے بتایا کہ ان امدادی اداروں کا کہنا ہے محدود سہولیات خاص طور پر ان مہاجر خاندانوں کے لیے مشکل کا باعث ہیں جنہوں نے اگلے کئی ماہ تک انہیں کیمپوں میں رہنا ہے۔

فسادات کے نتیجے میں بے گھر ہونے والے افراد کی تعداد اس وقت ایک لاکھ دس ہزار کے قریب ہے جس سے نمٹنے کے لیے مقامی حکومت کے پاس کافی وسائل نہیں ہیں۔
نقل مکانی کرنے والوں میں اکثریت روہنگیا مسلمانوں کی ہے۔

روہنگیا مسلمان بودھوں کی جانب سے سماجی قطع تعلقی کا بھی شکار ہیں جس کی وجہ سے ان کے لیے بازاروں سے اشیا خریدنا ناممکن ہے۔

یہ مسلمان اپنے اوپر ہونے والے حملوں خطرے کے پیش نظر ماہی گیری بھی نہیں کر سکتے جو کہ ان میں سے اکثریت کا بنیادی پیشہ ہے۔

ان دونوں گروہوں کے درمیان عدم اعتماد کی شدید فضا کو دیکھتے ہوئے اس بات کا امکان بہت کم ہے کہ بے گھر ہونے والے ان افراد میں سے اکثر اپنے گھروں کو واپس جا سکیں۔
اسی بنیاد پر امدادی کارکنوں کا کہنا ہے یہاں طویل مدت کے لیے امداد کی ضروریات ہیں۔

دوسری جانب برما میں حزب اختلاف کی رہنما آنگ سان سُوچی نے ملک کے مغربی علاقوں میں نسلی فسادات کے دوران ہزاروں کی تعداد میں بے گھر ہونے والے روہنگیا مسلمانوں کی حمایت کرنے سے انکار کرتے ہوئے پر تشدت فسادات کے حوالے سے صبر و برداشت کی اپیل کی ہے۔

بی بی سی سے بات کر تے ہوئے آنگ سان سُوچی نے کہا کہ فسادات کے مسئلے کی بنیاد کو دیکھے بغیر وہ روہنگیا مسلمانوں کی حق میں بول کر اپنی اخلاقی قیادت کا غلط استعمال نہیں کریں گی۔

یاد رہے کہ ملک کے مشرقی علاقے رخائن میں حالیہ فسادات کے دوران ساٹھ سے زیادہ لوگ ہلاک ہوئے تھے۔

ایک اندازے کے مطابق برما میں تقریباً آٹھ لاکھ روہنگیا مسلمان ہیں جنہیں حکومت شہریت دینے سے انکار کرتی ہے۔

برما میں بودھ مت مذہب سے تعلق رکھنے والے روہنگیا مسلمانوں کو بنگلہ دیش سے آئے ہوئے غیر قانونی مہاجرین سمجھتے ہیں اور ان کو برما سے نکالنا چاہتے ہیں۔
نگ سان سُوچی نے کہا کہ طرفین کا نقصان ہوا اور یہ ان کا کام نہیں کہ کسی گروہ کی حمایت کریں یا ان کے مسائل کو اجاگر کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ ’میں صبر کی اپیل کرتی ہوں لیکن میرے خیال میں کسی رہنما کو مسائل کی بنیاد دیکھے بغیر کسی خاص مقصد کے لیے کھڑے نہیں ہونا چاہیے۔‘
انھوں یہ بات جاننے سے بھی انکار کیا کہ آٹھ لاکھ روہنگیا مسلمانوں کو برمی شہریت نہیں دی جا رہی۔

تاہم ان کا کہنا تھا کہ انیس سو بیاسی میں بنائے گئے اس متنازع قانون کو دیکھنے کی ضرورت ہے جس کے رو سے برما کے روہنگیا مسلمانوں کو شہری حقوق کے دائرے سے باہر رکھا گیا۔

بی بی سی کے نامہ نگار جوناتھن ہیڈ کے مطابق روہنگیا مسلمانوں کے حق میں نہ بولنے پر آنگ سان سُوچی کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے اور ان کے اس رویے سے انسانی حقوق کی تنظیموں کو مایوسی ہوئی۔

ان کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ نے برما کے روہنگیا کو دنیا کے سب سے زیادہ تکلیف میں رہنے والی اقلیتیوں میں سے ایک قرار دیا ہے۔

آج کل کا نوجوان - ایک مکرہ چہرہ


آج کےدن پاکستان کےنوجوان جن دشوار راستوں پر نکل چکےہیں ان کی نہ تو کوئی منزل ہےاور نہ ہی دشوار راہوں سےچھٹکارا حاصل کرنےکا کوئی حل نظر آتاہی۔پچھلےدور کو مدنظر رکھتےہوئےاگر آج کےدور کا پردہ ہٹایا جائےتو ایسا دردناک منظر سامنےآتا ہےکہ پورا وجود تھرتھراتا ہےاور ایک سرسراہٹ پورےوجود میں سنسناتی ہی۔

پاکستان کےنوجوان ایسےموڑ پر کیوں اور کیسےآئی؟؟؟

یا تو ہماری حکومت کی ناقص پالیسیوں یا پھر ان کےوالدین کی لاپرواہی کی وجہ سےنوجوان نسل بےراہ روی کا شکار ہے۔ دیکھا جائےتو نوجوان نسل کی پستی ایک ایسےدہانےپر کھڑی ہوئی ہےجہاں سےواپسی کا نہ تو کوئی راستہ دکھائی دیتا ہےاور نہ ہی منزل کی کوئی کرن۔

اسلام کے نام پر بننے والی اس مملکت ِخداداد میں لا دینیت اور جنسی بداعتدالیوں کو کس طرح تیزی سے پروان چڑھایا جارہا ہے، اس کااندازہ پاکستان کے عام شہری نہیں کر پارہے۔ جن لوگوں کو اس کا اندازہ ہے، وہ بھی اپنے آپ کو بے بس محسوس کرتے ہیں۔

سکول اور یونیورسٹی میں دنکس کرنے اور بازارں میں جانے والے والی یہ لڑکیاں اور لڑکے اسی پاکستانی معاشرے کے فرد ہیں۔ یہ مسلمان گھرانوں کی اولاد ہیں، یہودی یاعیسائی نہیں ہیں۔ مگر وہ جس جنون اور پاگل پن کا شکار ہیں، 

کیا ایک مسلمان گھرانے سے تعلق رکھنے والے نوجوان لڑکوں اور لڑکیوں کا 'کنڈکٹ' (کردار) یہی ہونا چاہئے؟؟؟ 

پاکستان کے مستقبل کا انحصار کرپٹ لیڈروں اور سپر پاورز پر نہیں ۔ آج کے نوجوانوں کے اس فیصلے پر ہے جس میں ایک طرف قومی خدمت اور دوسری طرف ایک گمنام موت ہے ۔

ہم تو ویسے بھی جاہل لوگ ہیں شائد ہم جاہلوں کو کوئی سمجھا سکتا ہے کہ اسکو ترقی کہتے ہیں یا تنزلی ؟؟؟

میں نے تو سنا اور پڑھا ہے کہ ترقی تعلیم اور علم سے ہے اور تنزلی اسی عریانی سے کیا یہ درست نہیں ؟؟؟

کھلاڑی786: اکشے کی پاکستانی میڈیا کو لائیو وڈیو پریس کانفرنس کی دعوت


ممبئی…این جی ٹی…بالی ووڈ کے خطروں کے کھلاڑی اکشے کمار ایک بار پھر کھلاڑی سیریز کے ساتھ واپس آرہے ہیں جس کے لیے اس بار انہوں نے دنیا بھرمیں اپنے مداحوں سمیت پاکستانی فینز کا بھی دھیان رکھا ہے۔فلم کی تشہیری مہم کے لیے کی جانے والی پریس کانفرنس کے لیے انوکھے اقدامات کرتے ہوئے کھلاڑی کمار نے پاکستانی میڈیا کو بھی لائیو وڈیو پریس کانفرنس کی دعوت دی ہے۔سرحدوں کو بھلاکر امن کا منفرد پیغام بھیجتے اکشے کمار نے ایک وڈیو پیغام میں پاکستانی صحافیوں کو پاکستان کے شہر لاہور میں ہونے والی پریس کانفرنس میں مدعو کیا ہے۔اس لائیو وڈیو کانفرنس کا انعقاد لاہور کے دی رائل پام گالف اینڈ کنٹری کلب میں 4نومبر کو سہ پہرڈھائی بجے کیا جائے گا،جس میں اکشے کمار ممبئی سے براہ راست صحافیوں کے سوالات کے جواب دیتے نظر آئینگے۔واضح رہے کہ ہدایتکار اشیش آر موہن کی فلم کھلاڑی786 میں اکشے کے ساتھ آسن ،متھن چکربرتی،پریش روال اور ہمیش ریشمیہ اہم کردار ادا کررہے ہیں۔اکشے کمار کی کامیاب فلم کھلاڑی420کے12سال بعد آنے والی اس نئی ایکشن فلم کھلاڑی786کواکشے اور ہمیش نے مشترکہ طور پر پروڈیوس کیا ہے جو7دسمبر کو سینما گھروں کی زینت بنے گی۔

پاکستان کے خلاف آئس کریم کھاتا ہوں ، سچن ٹنڈولکر کے ٹوٹکے


ممبئی…لٹل ماسٹر سچن ٹنڈولکر کو رن مشین کہا جاتا ہے ،کیا آپ جانتے ہیں کہ انہوں نے یہ رنز کیسے بنائے ؟ کھانے کھا کر جی ہاں ٹنڈولکر پاکستان اور آسٹریلیا کے بولرز کا سامنا کرنے کے لئے کھانوں کے مختلف ٹوٹکے استعمال کرتے ہیں ،بھارتی اسٹار بیٹسمن سیچن ٹنڈولکر نے ممبئی میں اسپورٹس ہسٹورین Boria Majumdar'sکی کتاب کوکنگ ان دی رن کے لانچ پر تقریب میں شرکت کرنے والے لوگوں کو اپنے 23 سالہ کیریئر میں وہ کون سی ٹیم کے خلاف کیا کھاتے ہیں اور ان کے کھانے کے ٹوٹکے کتنے کامیاب ہوتے ہیں ۔ سچن کی گفتگو سے شایقین بھی کافی محضوظ ہوئے۔ ٹنڈولکر نے بتایا کہ 2003 ورلڈ کپ میں پاکستان نے بھارتی بولرز کی خوب دُھنائی کی تو ٹنڈولکر نے اپنے آپ کو ٹھنڈا کرنے کے لئے لنچ بریک میں کھانا نہیں کھایا ، بلکہ شعیب اختر اور وسیم اکرم جیسے بولرز کا سامنا کرنے اور 273 رنز کو فیس کرنے کے لئے آئس کریم کا ایک بڑے کٹورا ہڑپ کرگئے۔یوں وہ میچ بھی جیت گئے اور ٹھنڈے بھی ہوگئے ۔سچن کہتے ہیں کہ وہ ڈائٹ پلان پر یقین نہیں رکھتے بلکہ جو اچھا لگتا ہے کھا جاتے ہیں ۔آسٹریلیا کے خلاف وہ سبزیاں کھاکر جاتے ہیں اس کے لئے انہوں نے 2011 ورلڈ کپ کے کواٹر فائنل کا حوالہ دیا وہاں بھی بھارتی ٹیم جیت گئی ۔لیکن آخر میں ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اُن کی والدہ کے ہاتھ کے دال چاول کا کوئی مقابلہ نہیں۔ 

Hamid Khan stop Imran khan to Politicize the Supreme bar council Polls


first time in the history of Pakistan bar elections were concluded b/w two Unions of Supreme Bar council.
.
.
Khan also tried to involve politics in these election however great work done by Hamid khan Professional Group head.
It is massive slap on the face of people like Drsaleem (PTI supporter) who are constantly saying all political parties united against PTI in bar election. Unfortunately i have mentioned many time the lack of knowledge of PTI supporters. They call other as Munafiq and anti Pakistani .... just a laugh at such mental level.



Imran Khan's Speech at PTI Youth Convention - 4th November 2012



Saturday, November 3, 2012

ایک سیکنڈ میں20 ہزار ٹریلین سے زیادہ کیلکولیشنز کرنےوالاسپر کمپیوٹر تیار


امریکی ریاست ٹینی سی میں قائم اوک ریج نیشنل لیبارٹری نے کہاہے کہ اس نے دنیا کا سب سے تیز رفتار ’سپر کمپیوٹر‘ تیار کرلیا ہے۔نئے تیز رفتار کمپیوٹر کانام ’ ٹائی ٹین‘ رکھا گیا ہے اور سائنس دانوں کا کہناہے کہ وہ ایک سیکنڈ میں 20 ہزار ٹریلین سے زیادہ کیلکولیشنز کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔سائنس لیبارٹری کے ماہرین کے مطابق 20 ہزار ٹریلین کیلکولیشنز کا مطلب یہ ہے کہ اس کمپیوٹر پر دنیا کا ہرشخص ایک ساتھ 30 لاکھ کیلکولیشنز کرسکتا ہے۔ یاد رہے کہ دنیا کی آبادی سات ارب نفوس سے زیادہ ہے۔نئے سپرکمپیوٹر کی میموری 700ٹیرابائیٹ سے زیادہ ہے۔ٹائی ٹین دراصل اوک ریج نیشنل لیبارٹری میں پہلے سے موجود سپر کمپیوٹر ’ جیگوار‘ کی ترقی یافتہ شکل ہے۔ اس کاحجم پچھلے کمپیوٹر کے تقریباً برابر ہے لیکن قوت میں وہ اس سے دس گنا زیادہ ہے۔ٹائی ٹین کمپیوٹر تقریباً باسکٹ بال کے میدان کے مساوی رقبے پر پھیلا ہوا ہے اور اس کی اونچائی ڈھائی میٹر کے لگ بھگ ہے۔

Hai Koi Jawab - 2nd November 2012 - "The only mistake I made was NRO" Pervez Musharaf



جیسا کہ میں نے کہا تھا کہ پاکستان کا الله ہی حافظ ہے، پاکستان میں وہی دیکھ رہا ہوں میں - ہر لحاظ سے عوام کچلی گیی ہے ملک میں کوئی خوشحالی اور ترقی نہیں ہو رہی ور تمام منفی مسائل دہشتگردی ، انتہا پسندی ، معیشت سب تباہی کی طرف جا رہی ہے اور کچھ علیحدگی پسند عناصر بھی اٹھ کھڑے ہوئے ہیں - پرویز مشرف



Sweeper in Makkah turned into Millionaire


Street sweeper’s life transforms in Makkah

Manama: An expatriate working as a street sweeper in Makkah saw his life change in a blink during the Haj season after his estranged brother sought to make amends for wronging him by returning his share of the family fortune.

The Bangladeshi man was sweeping Taneem Street in Makkah when an old man wearing the Ihram cloth of Haj pilgrims crossed the busy road and embraced him warmly much to the perplexity of passersby. However, the sweeper returned the embrace, indicating his familiarity with the older man.

The embrace in fact was between two brothers who had not seen each other for more than five years in the aftermath of a bitter dispute over inheritance rights, Saudi news site Sabq reported. The two men were from a wealthy family in Bangladesh, but the older brother had refused to give his sibling his share of the inheritance estimated at 17 million Saudi riyals (Dh16.64 million) in cash in addition to several properties.

The older man even managed to have his younger brother sent to prison whenever he asked for his share. The younger brother, disappointed and dejected, opted to leave Bangladesh and work as a sweeper in the holy city of Makkah. As it turns out, the sweeper has become a millionaire in his home country.

He told the people who gathered around him and his brother that he had forgiven his brother who had apologised profusely for mistreating him and that he was ready to return home.

The older man said that he had been diagnosed with cancer and that he was not sure how long he would live.

According to the news site, the younger brother said he was ready to forget the past and move forward with his new life. “I will always be kind with the poor and the needy,” he said. “I have learned a lot about deprivation and poverty in the last five years. I will always be fair with everyone after I lived through years of injustice,” he said in Arabic, a language he learned during the time he spent sweeping the streets of Makkah.

Aman bahi kab mary ga ?



عرصہ ہوا ایک ترک افسانہ پڑھا تھا یہ دراصل میاں بیوی اور تین بچوں پر مشتمل گھرانے کی کہانی تھی جو جیسے تیسے زندگی گھسیٹ رہا تھا۔ جو جمع پونجی تھی وہ گھر کے سربراہ کے علاج معالجے پر لگ چکی تھی، مگر وہ اب بھی چارپائی سے لگا ہوا تھا۔ آخر اسی حالت میں ایک دن بچوں کو یتیم کر گیا۔ رواج کے مطابق تین روز تک پڑوس سے کھانا آتا رہا، چوتھے روز بھی وہ مصیبت کا مارا گھرانہ کھانے کا منتظر رہا مگر لوگ اپنے اپنے کام دھندوں میں لگ چکے تھے، کسی نے بھی اس گھر کی طرف توجہ نہیں دی۔ بچے بار بار باہر نکل کر سامنے والے سفید مکان کی چمنی سے نکلنے والے دھویں کو دیکھتے۔ وہ سمجھ رہے تھے کہ ان کے لیے کھانا تیار ہو رہا ہے۔ جب بھی قدموں کی چاپ آتی انھیں لگتا کوئی کھانے کی تھالی اٹھائے آ رہا ہے مگر کسی نے بھی ان کے دروازے پر دستک نہ دی۔ ماں تو پھر ماں ہوتی ہے، اس نے گھر سے کچھ روٹی کے سوکھے ٹکڑے ڈھونڈھ نکالے، ان ٹکڑوں سے بچوں کو بہلا پھسلا کر سلا دیا۔ اگلے روز پھر بھوک سامنے کھڑی تھی، گھر میں تھا ہی کیا جسے بیچا جاتا، پھر بھی کافی دیر کی "تلاش" کے بعد دو چار چیزیں نکل آئیں جنھیں کباڑیے کو فروخت کر کے دو چار وقت کے کھانے کا انتظام ہو گیا۔ جب یہ پیسے بھی ختم ہو گئے تو پھر جان کے لالے پڑ گئے۔ بھوک سے نڈھال بچوں کا چہرہ ماں سے دیکھا نہ گیا۔ ساتویں روز بیوہ ماں خود کو بڑی سی چادر میں لپیٹ کر محلے کی پرچون کی دکان پر جا کھڑی ہوئی، دکان دار دوسرے گاہکوں سے فارغ ہو کر اس کی طرف متوجہ ہوا، خاتون نے ادھار پر کچھ راشن مانگا تو دکان دار نے نا صرف صاف انکار کر دیا بلکہ دو چار باتیں بھی سنا دیں۔ اسے خالی ہاتھ ہی گھر لوٹنا پڑا۔ ایک تو باپ کی جدائی کا صدمہ اور اوپر سے مسلسل فاقہ، آٹھ سالہ بیٹے کی ہمت جواب دے گئی اور وہ بخار میں مبتلا ہو کر چارپائی پر پڑ گیا۔ دوا دارو کہاں سے ہو، کھانے کو لقمہ نہیں تھا، چاروں گھر کے ایک کونے میں دبکے پڑے تھے، ماں بخار سے آگ بنے بیٹے کے سر پر پانی کی پٹیاں رکھ رہی تھی، جب کہ پانچ سالہ بہن اپنے ننھے منے ہاتھوں سے بھائی کے پاؤں دبا رہی تھی۔ اچانک وہ اٹھی، ماں کے پاس آئی اور کان سے منہ لگا کر بولی "اماں بھائی کب مرے گا؟" ماں کے دل پر تو گویا خنجر چل گیا، تڑپ کر اسے سینے سے لپٹا لیا اور پوچھا "میری بچی، تم یہ کیا کہہ رہی ہو؟" بچی معصومیت سے بولی "ہاں اماں! بھائی مرے گا تو کھانا آئے گا ناں!" اگر ہم اپنے پاس پڑوس میں نظر دوڑائیں تو اس طرح کی ایک چھوڑ کئی کہانیاں بکھری نظر آئیں گی۔ بہت معذرت کے ساتھ کہہ رہا ہوں ہمارا معاشرہ مردہ پرست ہو چکا ہے۔ زندگی میں کوئی نہیں پوچھتا مگر دم نکلتے وقت ہونٹوں پر دیسی گھی لگا دیا جاتا ہے تا کہ لوگ سمجھیں بڑے میاں دیسی گھی کھاتے کھاتے مرے ہیں۔ غالبا منٹو نے لکھا ہے کہ ایک بستی میں کوئی بھوکا شخص آ گیا، لوگوں سے کچھ کھانے کو مانگتا رہا مگر کسی نے کچھ نہیں دیا۔ بیچارہ رات کو ایک دکان کے باہر فٹ پاتھ پر پڑ گیا۔ صبح آ کر لوگوں نے دیکھا تو وہ مر چکا تھا۔ اب "اہل ایمان" کا "جذبہ ایمانی" بیدار ہوا، بازار میں چندہ کیا گیا اور مرحوم کے ایصال ثواب کے لیے دیگیں چڑھا دی گئیں، یہ منظر دیکھ کر ایک صاحب نے کہا "ظالمو! اب دیگیں چڑھا رہے ہو، اسے چند لقمے دے دیتے تو یہ یوں ایڑیاں رگڑ رگڑ کر نہ مرتا"۔ پچھلے دنوں ایک تاجر نے ایک مزار پر دس لاکھ روپے مالیت کی چادر چڑھائی، جب کہ مزار کے سامنے کے محلے میں درجنوں ایسے بچے گھوم رہے ہوتے ہیں جنہوں نے قمیض پہنی ہوتی ہے تو شلوار ندارد اور شلوار ہے تو قمیض نہیں۔ حضرت مجدد الف ثانی فرمایا کرتے تھے کہ تم جو چادریں قبر پر چڑھاتے ہو اس کے زندہ لوگ زیادہ حقدار ہیں۔ ایک شخص رکے ہوئے بقایاجات کے لیے بیوی بچوں کے ساتھ مظاہرے کرتا رہا، حکومت ٹس سے مس نا ہوئی، تنگ آ کر اس نے خود سوزی کر لی تو دوسرے ہی روز ساری رقم ادا کر دی گئی۔ اسی طرح ایک صاحب کے مکان پر قبضہ ہو گیا، بڑی بھاگ دوڑ کی مگر کوئی سننے کو تیار نہیں ہوا، اسی دوران دفتر کی سیڑھیاں چڑھتے ہوئے اسے دل کا دورہ پڑا جو جان لیوا ثابت ہوا، پولیس نے پھرتی دکھائی اور دوسرے ہی دن مکان سے قبضہ ختم کروا دیا۔ فائدہ؟ کیا اب اس مکان میں اس کا ہمزاد آ کر رہے گا؟ کیا ہمارا "جذبہ ایمانی" صرف مردوں کے لیے رہ گیا ہے۔ اپنے ارد گرد موجود زندوں کا خیال رکھیے

راجھستان:لڑکیوں کےموبائل فون کےاستعمال اوراسکارف پہننے پر پابندی


بھارتی ریاست راجستھان میں پنچائت نے لڑکیوں کے موبائل فون استعمال کرنے اور اسکارف پہننے پر پابندی لگا دی۔راجستھان کے ضلع ڈوسہ میں ایک لڑکی کے گھر سے بھاگ جانے کے بعد پنچایت نے علاقے میں تمام لڑکیوں کے موبائل فون استعمال کرنے پر پابندی لگا دی۔ پنچایت کا کہنا ہے کہ لڑکیوں میں موبائل فون کا غلط استعمال بڑھتا جا رہا ہے اور اس کے برے اثرات سے بچنے کے لیے موبائل فون کے استعمال پر پابندی لگائی گئی ہے۔پنچایت کا کہنا تھا کہ اسکارف پر پابندی اس وجہ سے لگائی گئی تاکہ لڑکیاں اپنی شناخت نہ چھپا سکیں

وزیرستان میں آپریشن کے جواز کیلئے ملالہ کو گولی ماری گئی۔لارڈ نذیر


لارڈ نذیر احمد  نے کہا ہے کہ وزیرستان میں آپریشن کے جواز کیلئے ملالہ کو گولی ماری گئی،  برطانوی اخبار ”ٹیلی گراف کے مطابق  لارڈ  نذیر احمد  کہا  ہے کہ  نےملالہ یوسف زئی پر حملہ طالبان کو بدنام کرنے کی سازش کا حصہ ہے، اس واقعے سے نہیں سمجھنا چاہئے کہ وہ علاقہ تحریک طالبان کے کنٹرول میں ہے۔ اخبار لکھتا ہے لارڈ نذیر کو یقین ہے کہ ملالہ یوسف زئی پر حملہ طالبان کو بدنام کرنے کی سازش کا حصہ ہے، پاکستانی طالبان نے ملالہ فائرنگ کے فوری بعد اس حملے کی ذمہ داری قبول کرلی تھی اور دوبارہ حملے کی دھمکی بھی دی تھی، لیکن لارڈ نذیر احمد اس کے برعکس موٴقف رکھتے ہیں، انہوں نے شمالی لندن میں ولزڈن میں ایک اجلاس میں کہا کہ انہیں یقین ہے کہ وزیرستان میں طالبان کے مضبوط گڑھ میں فوجی آپریشن شروع کرنے کیلئے بہانہ (جواز) تراشنے کیلئے ملالہ کو گولی ماری گئی۔ انہوں نے لندن میں بھی ایسے واقعے کے پیش آنے کا دعویٰ کیا اور شمالی لندن میں ایک کمیونٹی اجلاس میں تقریر کے دوران جمی سیویل  پر جنسی حملے سے اس واقعے کا موازنہ کیا۔ اخبار نے لارڈ نذیر احمد کی اجلاس میں اردو اور انگریزی میں کی گئی گفتگو کی ویڈیو حاصل کرنے کا بھی دعویٰ کیا ہے، جس میں لارڈ نذیر نے کہا کہ انہوں نے ملالہ کے آبائی علاقے مینگورہ کا دورہ کیا ،وہاں عسکریت پسندوں کی طرف سے ایسا کوئی خطرہ نہیں۔ ان کاکہنا تھا کہ مجھے نہیں علم کہ ایسا کیوں ہوا، انہوں نے اجلاس میں بتایا کہ ممکن ہے کہ وزیرستان میں کوئی آپریشن یا ایسی کوئی کارروائی مقصود ہو ،اس کیلئے عوامی رائے کو اپنے حق میں کرنا یا اس میں اضافہ کرنا مقصد ہو اور ممکن ہے ملالہ کو اس سازش میں ہتھیار کے طور پر استعمال کیا گیا ہو۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اس واقعے سے یہ نہیں سمجھنا چاہئے کہ وہ علاقہ تحریک طالبان کے کنٹرول میں ہے، جرائم کسی جگہ بھی ہو سکتے ہیں، حتیٰ کہ برطانوی نشریاتی ادارے میں بھی ہوسکتے ہیں۔ لارڈ نذیر نے کہا کہ میں نے اپنا موٴقف تمام حقائق واضح ہونے کے بعد دیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ میں نے جو کچھ بھی کہا اس میں حکومت پاکستان کا ذکر نہیں، یہ پاکستانی معاملہ ہے برطانوی نہیں۔ انہوں نے کہا ملالہ فائرنگ کے اس خاص دن پر مجھے کوئی اندازہ نہیں ہے کہ کیا ہوا تھا، 3یا 4 دن بعد حقائق سامنے آنے کے بعد انہوں نے پاکستانی پریس میں طالبان کی مذمت کی تھی۔

بالغ بھارتی مردوں کیلئے پہلا پلے بوائے کلب


بالغوں کی تفریح کے لیے معروف کمپنی پلے بوائے بھارت میں اپنا پہلا کلب شروع کر رہی ہے۔بھارت میں کمپنی کا کاروبار برہنہ نہیں ہوگا بلکہ یہاں کے اقدار کا خیال رکھا جائے گا۔ پلے بوائے لائف سٹائل کا کہنا ہے کہ وہ مقامی بازار کے لیے اس میں تبدیلی لائیں گے۔پلے بوائے لائف ا سٹایل کے سربراہ سنجے گپتا نے کہا کہ یہ کلب دسمبر کے وسط میں گوا کے کینڈولم ساحل پر شروع کیا جا رہا ہے۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ عالمی سطح پر کسی بھی ساحل پر یہ پلے بوائے کا پہلا کلب ہوگا۔پلے بوائے اور اس طرح کی بالغوں کے لیے شائع ہونے والے رسالے پر بھارت میں پابندی ہے۔ ان رسالوں پر برہنہ ہونے کے لیے پابندی ہے۔پلے بوائے برانڈ سے بھارت میں حق حاصل کرنے والی کمپنی پلے بوائے لائف اسٹائل تین سالوں کے دوران آٹھ پلے بوائے کلب قائم کرے گی اور آنے والے دس برسوں میں پورے ملک میں ایک سو بیس کلب، مہخانے اور کیفے ہوں گے۔سنجےگپتا کا کہنا ہے کہ گوا کلب بائس ہزار مربع فٹ پر مشتمل ہوگا۔پلے بوائے کے ’بنی‘ یعنی خرگوش عام طور پر زیر جامہ پہنے دکھائے جاتے ہیں لیکن مسٹر گپتا کا کہنا ہے کہ بھارت کی روایت اور اقدار کا پاس رکھتے ہوئے اس میں تبدیلی لائی جائے گی۔ ’بنیز پلے بوائے کلب کا لازمی جزو ہیں لیکن بھارتی اخلاقیات اور احساسات کے پیش نظر ہم اس کے روایتی لباس کو نہیں اپنا سکتے جس کے ساتھ پلے بوائے منسلک رہا ہے۔حالیہ دنوں میں شرلن چوپڑہ ایسی پہلی بھارتی ہیں جنھوں نے پلے بوائے کے لیے برہنہ تصویریں کھچوائی ہیں۔ وہ اس رسالے کے نومبر کے شمارے میں نظر آئیں گی۔

امریکی صدارتی انتخاب کے بارے میں چونکا دینے والے حقائق


امریکہ کے صدارتی انتخاب کے بارے میں کچھ ایسی معلومات ہیں جنہیں جان کر آپ چونک جائیں گے۔انتخابات ہمیشہ منگل کو ہی کیوں ہوتے ہیں؟امریکہ میں ووٹنگ کی شرح جمہوری ممالک کے حساب سے بہت کم ہے اور ووٹ نہ ڈالنے والے افراد میں سے پچیس فیصد سے زائد کے مطابق ان کے پاس ووٹ ڈالنے کا وقت ہی نہیں ہوتا۔تاہم اس کے باوجود صدارتی انتخاب کو اختتامِ ہفتہ پر منعقد کروانے کی تمام کوششیں اب تک ناکام رہی ہیں۔امریکہ میں صدارتی انتخاب ہمیشہ نومبر کے پہلے منگل کو منعقد ہوتا ہے۔ اس رسم کا آغاز سنہ اٹھارہ سو پینتالیس میں ہوا تھا اور تب سے یہ سلسلہ جاری ہے۔درحقیقت انیسویں صدی میں امریکہ ایک زرعی ملک تھا اور کسانوں کو اپنی گھوڑا گاڑیوں پر بیٹھ کر قریبی پولنگ بوتھ تک پہنچنے میں بھی کافی وقت لگتا تھا۔سنیچر کو وہ کام کر رہے ہوتے تھے اور اتوار کو چل کر پیر کو ووٹ دینے کے لیے پہنچنا ممکن نہیں تھا۔بدھ کو مارکیٹ میں اناج بیچنے کا دن ہوتا تھا اور پھر کسانوں کو واپس لوٹنا ہوتا تھا۔ایسے میں ایک ہی دن بچتا تھا جو تھا منگل۔ اسی لیے اس دن پولنگ کی روایت قائم ہوئی ہے۔
کالے چشمے کا کھیل۔امریکہ میں دھوپ کا چشمہ پہنے سياستدان کی تصویر کھینچنا تقریباً ناممکن ہے۔ وہاں لوگ اپنے رہنماؤں سے نظر ملا کر بات کرنا چاہتے ہیں۔ کیا آپ نے کبھی اوباما یا بش کو کالے چشمے میں دیکھا ہے؟
شاید امریکی سمجھتے ہیں کہ اگر کسی شخص کی آنکھیں ڈھكي ہیں تو اس پر زیادہ یقین نہیں کیا جا سکتا۔
کسی کو بھی نہ چننے کا اختیار۔امریکی ریاست نیوادا میں ووٹرز کے پاس دونوں امیدواروں میں سے’ کسی ایک کو بھی نہیں ووٹ دینے کا اختیار موجود ہے۔وہاں ووٹر بیلٹ پیپر پر دیے گئے ناموں میں سے اگر کسی کو بھی پسند نہ کریں تو وہ ’نن آف دی کینڈیڈیٹس‘ یعنی ’ کسی امیدوار کے لیے نہیں‘ کی آپشن منتخب کر سکتے ہیں۔بیلٹ پیپر پر یہ آپشن سنہ انیس سو چھہتر سے موجود ہے۔
خطاب عمر بھر کے لیے۔امریکہ میں ایک عجیب رسم ہے۔مٹ رومني چھ سال پہلے میساچيوسٹس کے گورنر کا عہدہ چھوڑ چکے ہیں لیکن آپ نے دیکھا اور سنا ہوگا کہ انہیں ہر کوئی گورنر رومني کہہ کر بلاتا ہے جیسے کہ یہ کوئی خطاب ہو۔
امریکہ میں ایک وقت میں ایک ہی صدر ہوتا ہے لیکن آپ امریکہ میں لوگوں کو ایک ہی جملے میں صدر اوباما، صدر بش اور صدر کلنٹن کہتا سن سکتے ہیں۔مصنف ڈینیئل پوسٹ سیننگ اس بارے میں کہتے ہیں، ’یہ ہمارے سماج میں ان عہدوں کے وقار کو ظاہر کرتا ہے۔ یہ ظاہر کرتا ہے کہ ہم جمہوری ہیں۔ یہ سب بہت ہی اہم عہدے ہیں اسی لیے یہ کسی پیشہ وارانہ خطاب جیسا بن جاتا ہے‘۔ان کے مطابق ’یہ کسی جج یا ڈاکٹر کے ریٹائر ہونے جیسا ہے۔ یہ لوگ بھی تو ملازمت چھوڑنے کے بعد بھی جج یا ڈاکٹر ہی کہلاتے ہیں‘۔
کم ووٹوں کے باوجود جیت ممکن۔امریکی تاریخ میں چار صدور اپنے مدِمقابل امیدوار سے کم ووٹ حاصل کرنے کے باوجود صدر بنے ہیں۔ اس کی وجہ صدر بننے کے لیے’الیكٹورل ووٹ‘ کی اکثریت کا حصول لازم قرار دیا جانا ہے۔صدارتی انتخاب میں جو بھی امیدوار دو سو ستّر الیکٹورل ووٹ حاصل کر لیتا ہے، صدر بن جاتا ہے۔ہر امریکی ریاست کے اس کی آبادی کے حساب سے ’الیكٹورل ووٹ‘ طے ہیں اور یہ سارے کے سارے اسی امیدوار کو دیے جاتے ہیں جو ریاست میں عام چناؤ میں برتری حاصل کرتا ہے۔ماضی قریب میں سنہ 2000 کے صدارتی الیکشن میں الگور نے جارج بش سے پانچ لاکھ سے زیادہ ووٹ حاصل کیے لیکن وہ الیكٹورل ووٹوں کی گنتی میں پیچھے رہ گئے اور کچھ ماہرین کے مطابق اس مرتبہ ایک بار پھر ایسا ہو سکتا ہے۔
صدر رومنی تو نائب صدر بائیڈن۔یہ بھی ممکن ہے کہ صدارتی انتخاب میں دونوں امیدواروں کو برابر الیكٹورل ووٹ ملیں۔ اگر ایسا ہوتا ہے تو کیا ہوگا؟ایسی صورت میں صدر کا انتخاب امریکہ کا ایوان نمائندگان کرتا ہے۔اگر موجودہ الیکشن پر اس صورتحال کو لاگو کیا جائے تو ایک دلچسپ صورتحال سامنے آتی ہے۔اگر مٹ رومنی اور براک اوباما نے برابر الیکٹورل ووٹ حاصل کیے تو صدر کا فیصلہ ایوانِ نمائندگان کرے گا جہاں اس وقت رپبلکن پارٹی کی اکثریت ہے تو ایسے میں رومني بازی مار جائیں گے۔دلچسپ بات یہ ہے کہ ایسی صورت میں نائب صدر کے انتخاب کا حق سینیٹ کے پاس ہوتا ہے جہاں ڈیموکریٹک پارٹی اکثریت میں ہے اس لیے برابری کی صورت میں رومني صدر تو بن جائیں گے لیکن انہیں ڈیموکریٹک نائب صدر یعنی جو بائیڈن کو برداشت کرنا پڑے گا۔
صرف ایک تہائی امریکہ ہی اہم۔چھ نومبر کو ہونے والے انتخابات کا نتیجہ دراصل امریکہ کی ایک تہائی آبادی ہی طے کرے گی۔امریکہ کی چار سب سے بڑی آبادی والے ریاستیں یا تو مکمل طور پر رپبلکن پارٹی کے ساتھ ہیں یا ڈیموكریٹك پارٹی کے ساتھ۔ یہاں تک کہ صدارتی امیدوار ان ریاستوں میں انتخابی مہم تک نہیں چلا رہے ہیں۔ٹیکساس، جارجیا، نیویارک، الینائے اور دیگر پینتیس محفوظ ریاستوں کے سّتر فیصد رائے دہندگان کا رجحان واضح ہے کیونکہ یہاں پہلے سے ہی پتہ ہے کہ کون ریاست کس کے ساتھ ہے۔اس لیے ان ووٹرز کا ووٹ گنا تو جائے گا لیکن صدارتی انتخاب کا نتیجہ ان تیس فیصد امریکی ووٹروں پر ہی منحصر ہوگا جو ان ریاستوں میں رہتے ہیں جنہیں ’سوئنگ سٹیٹس‘ یا ڈانواڈول ریاستیں کہا جاتا ہے۔
نارتھ ڈکوٹا میں بغیر رجسٹریشن کے ووٹ۔اور آخر میں نارتھ ڈکوٹا ایسی اكلوتی امریکی ریاست ہے جہاں ووٹ ڈالنے کے لیے رجسٹریشن نہیں کروانی پڑتی۔ ریاست میں سنہ انیس سو اکیاون میں رجسٹریشن کا عمل منسوخ کر دیا گیا تھا.
یہاں ووٹ ڈالنے کے لیے ضروری ہے کہ آپ اٹھارہ سال یا اس سے بڑے امریکی شہری ہوں جو ریاست میں تیس دن سے قیام پذیر ہو۔ریاست میں ووٹنگ کے لیے چھوٹے چھوٹے یونٹ بنائے جاتے ہیں جہاں انتخابی عملہ عموماً ہر اس شخص کو ذاتی طور پر جانتا ہے جو وہاں ووٹ ڈالنے آئے گا۔ریاست کے سیکرٹری داخلہ ایل جیگر کے مطابق اگر کسی شخص کو عملہ شناخت نہیں کر پاتا تو اسے اپنی شناختی دستاویز دکھانا پڑتی ہے۔
امریکی صدارتی انتخاب کے بارے میں چونکا دینے والے حقائق

ShareThis